July 5, 2020

News PK

Latest Updates

چین کی ایک کمپنی نے لوگوں کا درجہ حرارت بتانے والے چشمے متعارف کرا دیئے

61

چین کی ایک کمپنی نے لوگوں کا درجہ حرارت بتانے والے چشمے متعارف کرا دیئے

چین کی ایک کمپنی نے لوگوں کا درجہ حرارت بتانے والے چشمے متعارف کرا دیئے
چین کی ایک کمپنی نے لوگوں کا درجہ حرارت بتانے والے چشمے متعارف کرا دیئے

بیجنگ چین کی ایک کمپنی نے لوگوں کا درجہ حرارت بتانے والے چشمے متعارف کرائے ہیں جس کی مدد سے کورونا مریضوں کی نشاندہی کرنے میں مدد مل رہی ہے ۔

لاک ڈاؤن ختم ہونے کے بعد زندگی کیسی ہوگی؟یہ وہ سوال ہے جو آجکل سب کے ذہن میں گردش کر رہا ہے۔ اس بات میں کوئی دورائے نہیں کہ پابندیاں ختم ہونے کے بعد معاشرے پہلے جیسے نہیں رہیں گے ۔ ایئر پورٹس ،اسکولز اور تفریحی مقامات جاتے وقت کورونا وائرس کا خوف ہر وقت طاری رہے گا۔

اس مسئلے کے حل کیلئے ٹیکنالوجی کمپنیاں بھی پیش پیش ہیں ۔ جب دسمبر دو ہزار انیس میں کورونا کی وبا پھوٹنا شروع ہوئی تو چینی کمپنی روکِڈ نے دو ہفتے کے قلیل عرصے میں علامات کی نشاندہی کیلئے آگمینٹڈ ریئلٹی چشمے تیار کیے ۔

انفرا ریڈ سنسر اور کیمرے سے لیس ٹی ون نامی چشمے دس فٹ کی دوری سے لوگوں کے درجہ حرارت لینے کے علاوہ تصاویر اور ویڈیوز بنانے کی بھی صلاحیت رکھتے ہیں ۔ چشمے کا موجودہ ماڈل دو منٹ میں دو سو افراد کے درجہ حرارت بتا سکتا ہے جس سے شاپنگ مالز، ٹرین اسٹیشنز اور دیگر رش والی جگہوں میں مشتبہ کیسز کی نشاندہی میں آسانی ہو گی۔

چین میں ٹی ون ماڈل چشمے کی مانگ میں بے پناہ اضافہ ہوا ہے اور اب تک ہزار چشمے فروخت کیے جاچکے ہیں ۔ روکِڈ کمپنی اب اِسے امریکی مارکیٹوں تک پہنچانے کا ارادہ رکھتی ہے ۔