26

چین کا سی پیک منصوبوں میں بڑی پیشرفت کا اعتراف … چین نے سی پیک سے مقامی لوگوں کوفائدہ، انفراسٹرکچر، توانائی کے منصوبوں میں بڑی پیشرفت کا اعتراف کیا

مکاؤ (اردوپوائنٹ اخبار تازہ ترین۔03 دسمبر2020ء) چین نے سی پیک منصوبوں میں بڑی پیشرفت کا اعتراف کرلیا ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق 11ویں انٹرنیشنل انفرا اسٹرکچر انویسٹمنٹ اینڈ کنسٹریشن فورم کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے چینی وزارت خارجہ کی ترجمان ہوا چونئنگ نے کہا کہ سی پیک بیلٹ اینڈروڈانیشی ایٹو کی تعمیرایک اہم پائلٹ پروگرام ہے، انفراسٹرکچر، توانائی کےمنصوبوں میں بڑی پیشرفت ہوئی ہے، متعدد شاہراہوں کی تعمیرسے روزگار پیدا ہوا،معاشی ترقی کوفروغ ملا۔ 11ویں انٹرنیشنل انفرا اسٹرکچر انویسٹمنٹ اینڈ کنسٹریشن فورم کے اجلاس ہوا جس سے مکاؤ اسپیشل ایڈمنسٹریٹو ریجن میں شامل لوگوں نے خطاب کیا۔ اپنے خطاب میں ترجمان نے کہا کہ سی پیک منصوبوں سےمقامی لوگوں کوفائدہ پہنچا، وباکے باوجود سی پیک کے منصوبےمعمول کےمطابق آگےبڑھے، منصوبے پاکستان کی معاشی نموکوسمجھنےمیں اہم کردار اداکرتےہیں ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ دونوں فریق اس منصوبے کو اہمیت دیتے ہیں اور اپنے رہنمائوں کے اتفاق رائے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے مل کر کام کر رہے ہیں اور موجودہ منصوبوں کے ساتھ معیار زندگی، صنعتی و زرعی تعاون پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے ملازمتیں دینے کے لئے پر عزم ہیں۔ ترجمان نے کہا کہ چین اور پاکستان دونوں سی پیک کو بی آر آئی کے لئے ایک اہم منصوبے میں تبدیل کرنے اور دونوں ممالک اور خطے کو زیادہ سے زیادہ فوائد پہنچانے کے لئے پرعزم ہیں۔
سی پیک اتھارٹی کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ نے فورم سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سی پیک بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو کا ایک اہم پائلٹ پراجیکٹ ہے، گزشتہ پان برسوں میں سی پیک کے فریم ورک کے تحت 22 تعمیراتی منصوبے مکمل ہوئے جن میں سڑکیں ، ریلوے ، ہوائی اڈے ، تھرمل بجلی ، پن بجلی ، قابل تجدید توانائی ، گوادر پورٹ ، خصوصی اقتصادی زون اور دیگر شعبوں کا احاطہ کیا گیا ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ کورونا وائرس کے باوجود سی پیک کے تمام منصوبے آگے بڑھ رہے ہیں جس سے امن اور معاشی نمو پر مبنی مستقبل کی امید روشن ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ انفراسٹرکچر پر سرمایہ کاری اور تعمیرات، روزگار کی منڈی اور قومی معیشتوں کی بحالی کی کلید ثابت ہو گی۔ انہوں نے ویڈیو لنک کے ذریعہ اجلاس کو بتایا کہ سی پیک کے تحت کسی بھی منصوبے کے تعمیراتی کام کو معطل نہیں کیا گیا اور نہ ہی کسی کارکن کو فارغ کیا گیا ہے۔

کیٹاگری میں : News

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں