خبریں

تازہ ترین

حکومت نے سرکاری اجلاسوں میں ریفریشمنٹ کی اجازت دیدی

حکومت پاکستان نے کفایت شعاری کی اپنی پالیسی میں نرمی کرتے ہوئے سرکاری اجلاسوں میں ہلکی پھلکی تواضع کی اجازت دے دی۔ مہمانوں پر فی کس 50 روپے خرچ کئے جاسکیں گے۔

وزارت خزانہ کی جانب سے جاری اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ حکومت نے سرکاری اجلاسوں میں محدود ریفریشمنٹ کی اجازت دے دی ہے۔ وزارت خزانہ کے چیف اکاؤنٹس آفیسر کی جانب سے وزارتوں کو اس حوالے سے مراسلہ بھی لکھ دیا گیا۔

مراسلے میں کہا گیا ہے کہ سرکاری اجلاسوں میں ہلکی پھلکی ریفریشمنٹ یعنی خاطر تواضع کی اجازت ہے تاہم اس پر فی کس صرف 50 روپے ہی خرچ کئے جا سکتے ہیں۔

مہمانوں کی تواضع پر اخراجات کا طریقہ کار بھی واضح کیا گیا ہے جس پر عملدرآمد کے بغیر رقم متعلقہ وزارت کو مل نہیں سکے گی۔

کسی بھی اجلاس میں جن افراد کو چائے پانی پیش کیا جائے گا، ان کی حاضری شیٹ (جس میں ان کا نام اور عہدہ بھی لکھا ہوگا) اجلاس کی صدارت کرنیوالے وزیر یا افسر سے تصدیق کے بعد ہی اکاؤنٹنٹ جنرل کو بھیجی جاسکے گی۔

مراسلے میں بتایا گیا ہے کہ کسی بھی اجلاس میں چائے پانی پیش کرنے سے پہلے اپنی وزات کے پرنسپل اکاؤنٹنگ آفیسر یعنی وفاقی سیکریٹری سے اجازت لینا لازمی ہوگی جبکہ تواضع کی مد میں 50 روپے فی کس سے زائد خرچ ہونے والی رقم کی ادائیگی نہیں کی جائے گی۔

کچھ عرصہ قبل سرکاری اجلاسوں میں شرکاء کو پانی کی ایک بوتل، چائے، بسکٹ اور سینڈوچ پیش کیا جاتا تھا، گزشتہ دور حکومت میں کفایت شعاری کے نام پر اس ریفریشمنٹ سے سینڈوچ کم کردیا گیا تھا۔

پاکستان تحریک انصاف کی وفاقی حکومت نے اپنی تشکیل کے بعد ہی کفایت شعاری مہم شروع کی تھی، اس مہم کے تحت سرکاری دفاتر میں اخراجات میں کمی لانے کا اعلان کیا گیا تھا۔

متعلقہ خبریں