خبریں

تازہ ترین

برطانوی ہاؤس آف لارڈز کے پہلے پاکستانی مسلمان رکن لارڈ نذیر مستعفی … لارڈ نذیر کو برطانیہ میں کشمیر کی ایک مضبوط اور توانا آواز سمجھا جاتا تھا، 23 سالہ خدمات کے بعد ریٹائر … مزید

لارڈ نذیر کو برطانیہ میں کشمیر کی ایک مضبوط اور توانا آواز سمجھا جاتا تھا، 23 سالہ خدمات کے بعد ریٹائر ہورہے ہیں

Shehryar Abbasi شہریار عباسی
منگل نومبر
23:41

برطانوی ہاؤس آف لارڈز کے پہلے پاکستانی مسلمان رکن لارڈ نذیر مستعفی
لندن (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین ۔17 نومبر 2020ء) برطانیہ میں کشمیر کے حقوق کی آواز اٹھنے والے لارڈ نذیر احمد 23 برس بعد برطانوی ہاؤس آف لارڈز سے مستعفی ہو گئے ۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق برطانیہ کے سینیئر پاکستانی نژاد سیاستدان لارڈ نذیر احمد برطانوی پارلیمان کے ایوان بالا یعنی ہاؤس آف لارڈز (برطانوی دارالامراء) سے ریٹائر ہوگئے۔ لارڈ نذیر نے ایک ماہ قبل ہاؤس آف لارڈکےکلرک (سینیئر افسر)کو خط لکھ کر ریٹائرمنٹ کی خواہش کااظہار کیا تھا۔

(جاری ہے)

برطانوی پارلیمنٹ کی جانب سے بھی لارڈ نذیر کی ریٹائرمنٹ کی خواہش مانتے ہوئے ان کا استعفیٰ قبول کرلیا ۔ خیال رہےکہ لارڈ نذیر احمد برطانوی دارالامراء کے رکن منتخب ہونے والے پہلے مسلمان پاکستانی تھے۔ لارڈ نذیر احمد آزاد کشمیر میں 1957 میں پیدا ہوئے تھے اور 1969 میں اپنے خاندان کے ہمراہ روڈہرم میں منتقل ہوئے، انہوں نے 1975 میں 18 برس کی عمر میں لیبر پارٹی میں شمولیت اختیار کی اور 1990 میں پہلی بار روڈہرم کونسل کے ممبر منتخب ہوئے۔

پہلی بار 1998 میں لیبر پارٹی کی جانب سے ہاؤس کے ممبر منتخب ہوئے تھے تاہم 2013 میں انہوں نے اختلافات پر استعفیٰ دیدیا تھا اور آزدانہ حیثیت سے انگلینڈ کے علاقے روڈہرم سے سیاست میں حصہ لے رہے تھے۔

متعلقہ عنوان :